Loading...
Showing posts with label Ebook. Show all posts
Showing posts with label Ebook. Show all posts

Caravan General Knowledge MCQs 2019

Add Comment

Caravan General Knowledge MCQs 2019 By Ch Ahmed Najib


Free Download Caravan General Knowledge MCQs Book in PDF Version
Caravan General Knowledge MCQs
Caravan General Knowledge MCQs

Caravan's Comprehensive General Knowledge MCQ's 2019 By Ch. Ahmed Najib Caravan Book House


General Knowledge forms an important portion of almost all Competitive Examinations. Therefore it is important to master general knowledge to attempt the examinations so that you get the career of your choice. Caravan's Comprehensive General Knowledge has been specially designed to cove this paper for various such examinations.
The material for this book has been collected after going through different examination papers. The book has been modeled so as to equip, as best as possible, the candidates with the basic general awareness required for their success in these examinations.

For comprehensive study and preparations of these exams many books are available in markets as well as online on different study websites. To help the candidates we have decided to upload the Caravan Comprehensive General Knowledge Book by Ahmed Najib in PDF form .


Caravan Comprehensive General Knowledge Book by Ahmed Najib


This book is published by Honourable Ch Ahmed Najib and his co-author Muhammad Soban Ch with the collaboration of Carvan Book House , Lahore. We will recommend you to buy this book from any well known book store in your city , but if you can't buy this you can  read it online or even can download it.

"Hacking the Hacker ($13 Value) FREE For a Limited Time"

Add Comment

"Hacking the Hacker ($13 Value) FREE For a Limited Time"

Do You Want To Become  Hacker?. Learn Hacking, Hack The Hacker is Best pdf Book For Student Who Want To Learn Hacking
Meet the world's top ethical hackers and explore the tools of the trade.

Cybersecurity is becoming increasingly critical at all levels, from retail businesses all the way up to national security. Hacking the Hacker takes you inside the world of cybersecurity to show you what goes on behind the scenes, and introduces you to the men and women on the front lines of this technological arms race. Light on jargon and heavy on intrigue, this resource drive to the heart of the field, introducing the people and practices that help keep our world secure.

This eBook will help you:

Go deep into the world of white hat hacking to grasp just how critical cybersecurity is
Read the stories of some of the world's most renowned computer security experts
Learn how hackers do what they do—no technical expertise necessary
Delve into social engineering, cryptography, penetration testing, network attacks, and more
As a field, cybersecurity is large and multi-faceted—yet not historically diverse. With a massive demand for qualified professional that is only going to grow, opportunities are endless. Hacking the Hacker shows you why you should give the field a closer look.


Hacking the Hacker
a righteous, powerful defender? This book is proof that the best and most
intelligent hackers work for the good side. They get to exercise their minds,
grow intellectually, and not have to worry about being arrested. They get to
work on the forefront of computer security, gain the admiration of their peers,
further human advancement in the name of all that is good and get well paid
for it. This book is about the sometimes unsung heroes who make our incredible
digital lives possible.

NOTE Although the terms “hacker” or “hacking” can refer to someone
or an activity with either good or bad intentions, the popular use is almost
always with a negative connotation. I realize that hackers can be good or bad,
but I may use the terms without further qualification in this book to imply
either a negative or a positive connotation just to save space. Use the whole
meaning of my sentences to judge the intent of the terms.
Most Hackers Aren’t Geniuses
Unfortunately, nearly everyone who writes about criminal

Offered Free by Wiley
See All Resources from Wiley

Fawad Chaudhry: Content of Reham Khan's book is vulgar

Add Comment
Reham Khan's book
Reham Khan's book
ISLAMABAD: Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) leader Fawad Chaudhry said on Tuesday that the content of TV presenter Reham Khan's book ‘is vulgar and disgraceful’.
"I demand Reham Khan to take back the contents of her book within 24 hours and apologize or we will take action," Chauhdhry warned while addressing the media in Islamabad on Tuesday.
“I was expecting that Reham would deny about the content of the book, which is vulgar, cheap and pornographic, but unfortunately she did not deny that till now,” he said.


Terming the book a part of "Raiwind scheme," the PTI leader said the book was supported by Hussain Haqqani.
"We know how the Raiwind mafia operates," he asserted.
"In 1990, Hussain Haqqani also did a press conference with Mustafa Khar before Tehmina Durrani's My Feudal lord was published," Chaudhry said while adding that a recent picture of Reham and Haqqani "is in front of everyone".
Further slamming the book which has stirred controversy in the country even before it is published, Chaudhry said, "FIA's cyber crime wing should investigate the emails Ahsan Iqbal sent to Reham."
"There are also reports of a meeting between Maryam Nawaz and Reham," he added. 
Terming Reham's upcoming book as part of the pre-poll rigging, the PTI leader said, "I urge the Election Commission of Pakistan (ECP) to take notice of the book and ban it."


Exclusive: Reham Khan alleges she is being 'bullied by PTI'

He also asked the Council Of Islamic Ideology (CII) to take up the issue "as Reham has attempted to damage the entire family system".
"Reham said that she penned the book while sitting with her young son and sister but the contents of the book are shocking and damaging of the entire family system of Pakistan," the PTI leader said.
Chaudhry further questioned how Reham had been living a "princess's life" while not earning any money. 
"What is her source of income," he asked while alleging that Reham is no longer employed. 
"She has been divorced for three years and has been snapped at five-star hotels and islands in Istanbul but where is she getting the money from," he asked.
The PTI leader also quoted Salman Ahmed as alleging that Reham received 100,000-pound sterling from Shahbaz Sharif. 
Questioning the timing of the book, Chaudhry said, "Reham has been divorced for three years but she decided to publish the book two months before the upcoming election."
He further stated that slanderous campaigns have also been initiated in the past against Imran. 
"In 1996, the Sita White scandal was brought up as Imran entered politics and now this book has surfaced," he added while claiming that Zulfikar Ali Bhutto's fake photos were also circulated in the past ahead of elections. 
Stating that "everyone associated with Imran becomes famous," Chaudhry said, "Even Imran's dog Sheru is popular on social media."
The PTI leader also urged Pakistan Electronic Media Regulatory Authority (PEMRA) to take notice of the "gossip shows" being aired on television. 
"Everyone is gossiping on TV and Reham and everyone else is enjoying it," he said. 

Nawaz should kick off election campaign by apologizing: Chaudhry

Chaudhry also advised former prime minister Nawaz Sharif to kick off his election campaign for 2018 general election by apologizing to the nation.
"Nawaz should apologize to the nation for all the fake promises he made," the PTI leader added.
He further said that Chief Justice of Pakistan Justice Mian Saqib Nisar's efforts for democracy and Constitution are laudable. 
"CJP has said the delay in elections will not be accepted," he said. 

The real motive behind the book is to defame Imran before polls

The PTI spokesperson while speaking in Geo News' show Aaj Shahzeb Khanzada Kay Saath said that Reham is asked to confirm or deny the content of the manuscript in the legal notice sent by PTI leaders.
"If she doesn't deny the content it clearly means that she has penned down vulgar language in the book," he said. " Its an irony that Reham said she edited the book with her son."
Chaudhry said that Hamza Ali Abbasi is not an official representative of the PTI. 
"There is a difference being a supporter and holding a party office," he said.
He said that the real motive behind the book is to defame Imran before the polls.

Reham Khan Book Pdf Free Download

"PML-N has used the same tactic before against Benazir and Nusrat Bhutto. Three days after the Panama decision, Hanif Abbasi and Abid Sher Ali said that a book is about to come."
He alleged that Reham's autobiography has been written in partnership with former Pakistan's ambassador to United States Hussain Haqqani.
"No publisher will take the risk to publish Reham's book," the PTI spokesperson claimed. 

Reham Khan Book pdf Free Download Online [Read Here, Download Link]

Add Comment
Reham Khan Book pdf Free Download
Reham Khan Book pdf Free Download


Reham Khan Release Her Book in Public 





Riham Khan's book releases on Amazon 

Rehman Khan's former wife Imran Khan's chairman, journalist and Pakistan Tehreek-e-Insaf chairman, was released on the premises website.

The 563-page book is named 'Raham Khan' and in which the writer has listed the details of his life's important events. The book was released before the release of this book. The information contained by his ex-husband Imran Khan and other personalities in the leaked material caused a storm over Pakistani politics and Internet. imran khan wife

The book is written on the Amazon website that sensitive issues related to society and politics have been described and its author had to face threats such as threats, harassment, and life danger. 

Remember that Pakistan Tehreek-e-Insaf leader Hamza Ali Abbasi and singer Salman Ahmed had been accused of taking a million pounds from former Chief Minister Punjab Shahbaz Sharif for the book on Reham Khan

As well as Imran Khan's close friend Zulfiqar Bukhari alias Zulfiqar Bukhari, former Pakistan captain's team, Wasim Akram, former Rahim Khan's ex-husband Ejaz Rehman and a British-born Pakistani woman also recited Reham Khan to the news gone.

However several PMLN leaders have denied any connections with Reham Khan.
Amidst all the brickbats that she is receiving, there are those who appreciate her candidness. @mahwashajaz_ tweeted: “Say whatever you want about Reham Khan, the woman is brave as heck. She stands against all the hate, all the vitriol & refuses to back down. She could have been a great asset to PTI. What a shame that Khan Sab couldn’t appreciate her value to PTI.”

With thousands of tweets still rolling in, the controversial discussion continues.

Stay order issued on Reham Khan’s ‘tell-all’ book launch


A civil court in Multan issued a stay order in relation to the book being launched by Reham Khan, former wife of Pakistan Tehreek-e-Insaf Chairman Imran Khan, on Tuesday.
A petition filed by Imran’s lawyer Ghulam Mustafa Chohan to stop Reham’s autobiography being published in the country.
The lawyer adopted the stance that the Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N) conspired with Reham and produced the book together with former Pakistan envoy to the United States Husain Haqqani to defame the PTI.
The petitioner appealed that some segments of the ‘tell-all’ book are fictitious and contradict reality. Hence, the petitioner argued, the book should be banned and its publication halted.

REHAM KHAN BOOK PDF IN URDU [ REHAM KHAN BOOK URDU ]

The court also summoned a reply from Reham, Haqqani and Pakistan Electronic Media Regulatory Authority (Pemra) by June 9.
On Monday, Reham served a defamation notice on actor Hamza Ali Abbasi. Her lawyer Yasser Latif Hamdani confirmed this while speaking with The Express Tribune.
The notice says that since June 2, Abbasi has been spreading, publishing and broadcasting several communications, statements, and representations online and in print and broadcast media against Reham, including accusing her of receiving GBP100,000 from the PML-N and Shahbaz Sharif.
It also lists the accusation that Reham was in contact via email with PML-N leader Ahsan Iqbal, adding that Iqbal has denied this and clarified that he never contacted her through email and had only met her a few times while appearing as a guest on her TV show.
The notice says that the false statements have continued circulating in the media with no attempt to deny them being made by Abbasi.




⇩⇩ Download Link  ⇩⇩

The Spy Chronicles RAW, ISI And The Illus A. S. URDU PDF

Add Comment
The Spy Chronicles RAW, ISI And The Illus A. S. URDU PDF
The Spy Chronicles RAW, ISI And The Illus A. S. URDU PDF
Previously by A.S. Dulat and Aditya Sinha
Kashmir: The Vajpayee Years (2015)
Previously by Aditya Sinha
The CEO Who Lost His Head (2017)
Death of Dreams: A Terrorist’s Tale (2000)
Farooq Abdullah: Kashmir’s Prodigal Son (1996)
Forthcoming from Asad Durrani
Pakistan Adrift: Navigating Troubled Waters (2018)
THE SPY
CHRONICLES
RAW, ISI and the
Illusion of Peace
A.S. Dulat, Asad Durrani
and Aditya Sinha
To my late parents, Shamsher and Raj, who spent many joyous hours playing
bridge with two successive High Commissioners of Pakistan in India: Syed Fida
Hussain, my father’s former ICS colleague, and Abdul Sattar.
—A.S. Dulat
To all the faceless agents who take great risks in the service of their country.
—Asad Durrani
To my parents, Neelam and Chandreshwar Narain Sinha, who, in England during
1965-71, were best friends with Gulshan and Nazir Hussain, immigrants from
Lahore.
—Aditya Sinha

Download HERE





Read Summary of Book in Urdu

ٓائی ایس ٓائی اور را کے چیف میں خفیہ ملاقاتیں
آئی ایس آئی اور بھارتی خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہان کی تہلکہ خیز کتاب کا خلاصہ ۔۔۔ پہ باب
آئی ایس آئی اور را کے چیف کیسے ایک میز پر بیٹھے
جنرل اسد درانی اور امرجیت سنگھ دولت نے بھارتی صحافی ادیتیا سنہا کو مشترکہ انٹرویو میں وضاحت کی ہے کہ دونوں شخصیات کیسے قریب ٓائیں اور ان کے درمیان تعاون کیسے شروع ہوا۔ ٓائی ایس ٓائی اور را کے سابق سربراہان پہلی بار بنکاک میں ملے تھے اور دونوں کو ایک دوسرے کی گفتگو اور خیا ت پسند ٓائے۔ جنرل درانی کہتے ہیں دونوں ممالک میں پیشہ وارانہ تعاون ضروری ہے، حکومتیں ٓاتی جاتی ہیں مگر پیشہ ور لوگ زیادہ دیر ٹھہرتے ہیں۔ امرجیت سنگھ دولت کہتے ہیں وہ جنرل صاحب سے متاثر
ہوئے۔ دونوں ٹی وی نہیں دیکھتے اور وہسکی کے شوقین ہیں۔ جنرل صاحب
کا غیررسمی اور کھ انداز انہیں پسند ہے۔ راء کے سابق سربراہ، جنرل اسد درانی کو جنرل صاحب کہہ کر مخاطب کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عام طور پر ایجنسیوں سے تعلق رکھنے والے کھل کربات نہیں کرتے۔ لیکن جنرل
1
صاحب ملاقاتوں میں انٹیلیجنس معاملات پرکھل کر بات کرتے تھے اس لئے دونوں قریب ٓاتے چلے گئے۔
ہر انٹیلیجنس ایجنسی پراکسیز کا استعمال کرتی ہے: اسد درانی
انٹیلیجنس ایجنسیوں کی پراکسی وارز مشہور ہیں۔ جنرل اسد درانی کا اس بارے میں موقف یہ ہے کہ پراکسیز، انٹیلی جنس ایجنسیوں کی ضرورت ہیں۔ بلکہ اسد درانی نے دولت کو مخاطب کرکے یہ بھی کہا تھا کہ بنگلہ دیش میں مکتی باہنی کو بھی بھارتی انٹیلیجنس نے بنایا تھا۔ جب راء کے سابق سربراہ نے یہ کہا کہ ممبئی حملوں سے جیسے واقعات کے جواب میں سرجیکل سٹرائیکس بھارت کی مجبوری ہیں تو جنرل اسد درانی نے انہیں بتایا کہ سرجیکل سٹرائیکس کا دکھاوا (کوریوگراف) کیسے کیا جا سکتا ہے۔
دونوں سابق سربراہان کے تحقیقی مقالے پرطوفان کھڑا ہو گیا
دونوں شخصیات کے درمیان مختلف عالمی فورمز پر م قاتوں کا سلسلہ جاری رہا۔ وہ بنکاک، اس م ٓاباد، استنبول اور لندن میں بھی ملے۔ انہوں نے دونوں ممالک میں انٹیلیجنس تعاون پر ایک مقالہ بھی لکھا جو بھارتی اخبار دا
ہندو اور پاکستانی اخبار ڈان میں شائع ہوا۔ اس مقالے پر امریکہ میں پاکستانی اور بھارتی امور کے ماہر سٹیفن کوہن نے جنرل اسد درانی سے رابطہ کیا اور کہا کہ ایسی کوششیں جاری رہنی چاہئیں۔
2
اسد درانی کا کہنا تھا کہ دونوں طرف ایسے لوگ ہیں جنہیں اس مقالے پر غصہ بھی ٓایا۔ وہ سمجھتے ہیں کہ یہ لوگ اپنے دور میں من مانی کرتے رہے اور اب مل کر مقالے لکھ رہے ہیں۔ امریکہ میں بھی کئی تھنک ٹینکس ہیں جوتحقیقاتی مقالے شائع کرکے سینیٹ کو بھیجتے رہتے ہیں۔ لیکن امریکی حکومت وہی کرتی ہے جو اس کے خیال میں درست پالیسی ہے۔ اور امریکہ میں صرف ان تھنک ٹینکس کے مقالوں کو اہمیت ملتی ہے جو امریکی
حکومت کی پالیسی کے عین مطابق چلتے ہیں۔
را چیف کو ناکام بنانے کی کوششیں
جنرل اسد درانی نے امرجیت سنگھ دولت کے متعلق یہ رائے بھی دی کہ وہ ایک مختلف انسان ہیں۔ کیونکہ وہ انٹیلیجنس بیورو سے تعلق رکھتے تھے اور انہیں بہت بعد میں بھارتی خفیہ ایجنسی راء میں تعینات کیا گیا۔ کئی لوگوں نے
انہیں ناکام بنانے کی بھی کوشش کی کیونکہ وہ نہیں چاہتے تھے کہ ایجنسی سے باہر کا کوئی شخص راء میں ٓا کرکامیاب ہو جائے۔ اسد درانی اور امرجیت دونوں نے ایک دوسرے کو سراہتے ہوئے کہا کہ انہیں ایک دوسرے کے تجربات سے استفادہ کرکے خوشی ہوئی اور ایسا تعاون جاری رہنا چاہیے۔
مسئلہ کشمیر کیسے حل ہو گا؟ را کے چیف کی
رائے
جنرل اسد درانی کہتے ہیں امرجیت سنگھ دولت تنازع کشمیر کو سمجھتے ہیں اور انہیں وہاں کے لوگوں کا بھی خیال ہے۔ امرجیت سنگھ نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کو سمجھ کر آپ افغانستان اور فلسطین کے تنازعات کو بھی حل
3
کرسکتے ہیں۔ امرجیت سنگھ کو اس بات پر بھی حیرت تھی کہ کئی کشمیری رہنماء بھی اس بات کے حامی تھے کہ دونوں ممالک کی ایجنسیوں کو مل بیٹھنا چاہیے۔ ان کشمیریوں نے تجویز دی کہ آپ بھارت میں مسئلہ کشمیر کو سمجھنے والوں چند لوگوں اور اور ٓائی ایس ٓائی کے سابق سربراہان کو ایک ساتھ بٹھائیں تو مسئلے کا کوئی نہ کوئی حل ضرور نکل ٓائے گا۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کی موجودہ وزیراعل ٰی محبوبہ مفتی پاکستان کا نام
کبھی کبھار ہی لیتی ہیں۔ لیکن ڈاکٹر فاروق مسلسل یہ کہتے رہے ہیں کہ جب تک پاکستان اور بھارت مل بیٹھ کر بات نہیں کرتے تب تک یہ مسئلہ حل نہیں ہو سکتا۔
بھارتی ایجنسیاں کشمیر میں پیسہ استعمال کرتی ہیں: امرجیت سنگھ دولت
ادیتیہ سنہا نے امرجیت سنگھ دولت سے پوچھا کہ انہوں نے اپنی کتاب میں یہ بات کہی ہے کہ کشمیر میں پیسے کا استعمال ہو رہا ہے۔ امرجیت سنگھ دولت کا کہنا تھا کہ اس انکشاف پر بھارت کے طاقتور حلقے ان سے ناراض تھے۔ انہیں تہاڑ جیل بھیجنے کی دھمکیاں بھی دی گئیں۔ کچھ لوگوں نے الزام لگایا کہ میں کشمیر میں رشوت استعمال کر کے اپنی جگہ بناتا رہا ہوں۔ لیکن میں ایسے لوگوں سے کہتا ہوں کہ ٓاپ مسئلہ کشمیر سے خود نمٹ کردکھائیں۔
4
2
ایک چوکیدار کی گواہی نے تاریخ بدل دی
آئی ایس آئی اور بھارتی خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہان کی تہلکہ خیز کتاب کا خ صہ ۔۔۔ دوسرا باب
ایک چوکیدار نے مجھے جاسوس بنوا دیا
سپائی کرونیکلز میں ایک جگہ ٓادیتیہ سنہا نے سابق ڈی جی ٓائی ایس ٓائی اسد درانی سے پوچھا کہ وہ ٓائی ایس ٓائی کا حصہ کیسے بنے۔ اسد درانی کا جواب تھا کہ حادثہ تھا جو مجھے ٓائی ایس ٓائی میں لے گیا۔ مجھے تو اس کام کی تربیت ہی نہیں ملی تھی بلکہ میں ایک نارمل سا ئن ٓافیسر تھا۔ ٓائی ایس ٓائی کے لیے کام کرنے کا پہ تجربہ 0891سے0891کے درمیان اس وقت ہوا جب میں جرمن ایمبیسی میں دفاعی مشیر تھا۔ اور یہ تجربہ بھی بس برائے نام ہی تھا۔ اور میری پوسٹنگ کا جو قصہ ہے وہ بڑے ہی مزے کا ہے۔ ہوا یوں کہ میرا نام اس پوسٹ کے لیے گیا تو معمول کے مطابق مختلف ایجنسیوں نے میرے بارے میں معلومات اکٹھی کیں۔ ایک ایجنسی کے لوگ ماڈل ٹائون
ہور میں میرے سسرال بھی گئے ۔ میرے سسرال والے گھر پر نہیں تھے توانہوں نے پڑوسی گھر کے چوکیدار سے سوال پوچھا کہ یہ کیسے لوگ ہیں ۔ چوکیدار نے جواب میں کہا یہ اچھے لوگ ہیں۔ اس چوکیدار کی گواہی نے مجھے یہ پوسٹ د دی بلکہ میں اکثر اس بات کا ذکر کرتا ہوں کہ میری جرمنی پوسٹنگ کا سرٹیفکیٹ اس چوکیدار نے دیا تھا۔
5
اسد درانی جرمنی سے راز کیسے معلوم کرتے تھے
خیرجرمن سفارت خانے میں بطور مشیر دفاع میں ٓائی ایس ٓائی کے لیے کام کررہا تھا مگر مجھے کوئی خفیہ مشن نہیں سونپا ہوا تھا۔ سادہ لفظوں میں کہوں تو میں جرمنی میں جاسوسی نہیں کررہا تھا۔ میرے میزبان مجھے اچھی
طرح جانتے تھے اور کچھ بھی مجھے پوچھنا ہوتا وہ مجھے بتا دیتے تھے، اس کی وجہ میری یہ خوش قسمتی تھی کہ اس دور میں افغانستان میں سوویت فوجیں داخل ہو چکی تھیں اور پاکستان مغرب کا اتحادی تھا، سو مجھے جو جاننا ہوتا وہ میں ٓاسانی سے معلوم کر لیتا۔ میں نے نیٹو مشیر کے بعد سب سے زیادہ معلومات وہاں سے نکالیں۔ بلکہ اکثر تو خصوصی اور اہم معلومات مجھے ٓاسانی سے مل جاتیں۔
بھارت مجھے سخت گیر موقف فوجی سمجھتا تھا، درانی
91میں میں پاکستان واپس ٓاگیا اور حسب سابق ئن افسر کے طور پر کام میں لگ گیا۔ ضیا طیارہ حادثے میں ہ ک ہو گئے تو جنرل اسلم بیگ نے مجھے ملٹری انٹیلی جینس کا سربراہ بنا دیا۔ سچ کہوں تو میرے لیے یہ ناگہانی ٓافت
تھی۔ اس کے بعد ٓائی ایس ٓائے میں واپسی ہوئی تو وہ بھی حادثاتی تھی۔ ہوا
یوں کہ اگست 0881میں بے نظیر حکومت ختم کی گئی تو مجھے اس وقت تک کے لیے عارضی طور پر ٓائی ایس ٓائی کا سربراہ بنادیا گیا اور کہا گیا کہ جیسے ہی کوئی مناسب بندہ ہمیں ملے گا ٓاپ کو واپس ب لیا جائے گا۔ مگر دوسال کی ایم ٓائی کی سربراہی اور افغانستان، کشمیر اور عراق کویت پر میری گہری نظر تھی اس لیے میری نوکری پکی ہوگئی۔میں اٹھارہ ماہ تک
6
ٓائی ایس ٓائی کا حصہ رہا اس کے بعد واپس ایم ٓائی ٓاگیا وہاں مجھے بھارت کی ایک خفیہ رپورٹ دیکھنے کو ملی جس میں مجھے سخت گیر موقف رکھنے وا فوجی لکھا گیا تھا۔ مجھے حیرت ہوئی کہ ٓاج تک جرمنی میں بھارتی اتاشی کے ع وہ میری کسی ہندوستانی سے بات چیت نہیں ہوئی تھی مگر یہ موقف بنا لیا گیا۔ جب ہم دوسرے ملکوں میں کام کرتے ہیں تو نہ ہم سخت گیر ہوتے ہیں نہ نرم خو(نہ باز نہ فاختہ) بلکہ کولیگ ہوتے ہیں جو
تیسرے ملک میں کام کر رہے ہوتے ہیں۔ اور اس دوران عام سے موضوعات پر معمول کی بات چیت بھی ہوتی رہتی ہے۔
میں نے فوج میں انٹیلی جینس کور بنائے
ٓادیتیہ سنہا کی طرف سے جب یہ پوچھا گیا کہ جرمنی جانے سے پہلے خفیہ ایجنسی کا ٓاپ کا تصور کیا تھا، تو اس کے جواب میں جنرل اسد درانی نے کہا کہ وہی تصور تھا جو ایک عام پاکستانی، ہندوستانی یا کسی بھی ملک کے باشندے کا ہو سکتا ہے۔ سائے جیسے، خفیہ، خاموش ایسے لوگ جن سے محتاط رہنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ لیکن جب میں نے کام کیا تو مجھے حیرت ہوئی کہ پتہ نہیں ایسا تصور کیوں قائم ہوا ہے۔ ہم صرف ملک کو درپیش خطرات کا تخمینہ لگاتے ہیں۔ ایسے خطرات جن کی سرپرستی بیرونی عناصر کررہے ہوتے ہیں۔ ہم ٓائی ایس ٓائی میں بس یہی کرتے تھے کہ متعلقہ حکام کو خطرات سے ٓاگاہ کردیں۔ مجموعی طور پر مجھے یہ کام ویسا نہیں
لگا جیسا عام تاثر ہے بلکہ مجھے تو یہ معزز پیشہ لگا۔ اور یہی ذہن میں رکھ کر میں نے پاکستان ٓارمی میں انٹیلی جینس کارپس تشکیل دیے۔ میراماننا ہے کہ انٹیلی جینس کے کچھ پہلو ایسے ہیں جنہیں سپیشلسٹس کو ہی ڈیل کرنا چاہیے۔ انٹیلی جینس کارپس کا خیال پہلے بھی ٓارمی میں موجود تھا مگر
7
خدشات یہ تھے کہ اس سے مافیا بن جاتا ہے اور ملکی مفاد سے زیادہ برادری کے مفادات سامنے رہتے ہیں۔ اور دوسرے اس سے ڈرے سہمے رہتے ہیں۔ لیکن میں نے اس کے باوجود یہ قدم اٹھایا۔
بعض جاسوسوں کی معلومات ضرورت سے زیادہ
کیوں ہوتی ہیں
ہمارے اس کام میں ایک چیز البتہ ہے جسے کولیٹرل ڈیمیج کہا جا سکتا ہے۔ بعض اوقات ایسا ہوتا کہ میں ایسے لوگوں کے پیچھے ہوتا تھا جو دشمن ملک کے پیرول پر ہوتے تھے یا ایسے لوگوں کے لیے کام کررہے ہوتے جن کے مفادات میرے مفادات سے متصادم تھے تو اس دوران ان کی کوئی ایسی سرگرمی ہمارے ہاتھ لگ جاتی جس کا ملکی مفاد سے کوئی لینا دینا نہیں ہوتا تھا ۔ جیسے کسی لڑکی کے ساتھ پکڑلیا اور بلیک میل کرنا شروع کردیا ، اب اس معاملے کا ملکی مفاد سے کوئی لینا دینا نہیں ہوتا تھا لیکن چونکہ خفیہ معلومات جمع کرنے والے ہر وقت پیچھے ہوتے تھے تو ان کے پاس ایسی معلومات بھی ٓاجاتیں۔ میری کوشش یہ رہی کہ ایسے معام ت پر کڑی نگرانی رکھوں اور ملکی مفاد کے خ ف معلومات کے ع وہ اور معلومات کو بلیک میلنگ کا ذریعہ نہ بننے دوں۔ اس طرح کی چیزیں ہوتی ہیں لیکن یہ ہمارا اصل کام نہیں ہے۔ مگر ایسی حرکتوں کی وجہ سے لوگ خفیہ ایجنسیوں کے کردار کے مخالف ہو جاتے ہیں۔ جاسوس بعض اوقات ایسی بھی باتیں جان
جاتے ہیں جو ہم نہیں چاہتے کہ وہ جانیں۔ مگر اس کام کی اب نوعیت ہی ایسی ہے۔ کیونکہ لوگوں کو اگر معلوم ہو جائے کہ انہیں ڈرایا جا سکتا ہے معلومات کا استحصال کیا جا سکتا ہے تو وہ ڈر جاتے ہیں۔
8
نوازشریف کو ایک ع ج مرض ہے
ٓادیتیہ سنہا نے جنرل درانی سے ایک دلچسپ سوال کیا کہ نوازشریف کے ساتھ کام کرنے کا تجربہ کیسا رہا۔ اس پر جنرل درانی کا کہنا تھا کہ ان کےساتھ میری کبھی نہیں بن سکی۔ان کے پہلے دور حکومت میں میں ٓائی ٓایس ٓائی کا سربراہ تھا۔ میرے خیال میں نوازشریف اعلی ذہنی ص حیتوں کے
مالک نہیں تھے بلکہ میرا تو خیال ہے کہ بعض چیزوں کے بارے میں انہیں مالیخولیا تھا۔ وہ ہروقت اسی تاک میں رہتے کہ پتہ نہیں فوج اب کیا کرے گی، پتہ نہیں ٓائی ایس کیا کرے گی، ٓائی ایس ٓائی چیف میری پسند کا ہونا چاہیے۔ جب میرے باس مرزا اسلم بیگ ریٹائر ہو گئے اور چونکہ ٓائی ایس ٓائی کے سربراہ کا تعین وزیراعظم کو کرنا ہوتا ہے اور ٓارمی کبھی نہیں کہتی کہ ’’اسی ٓادمی کو لگائو‘‘۔ تو میں اس وقت جانے کو تیار تھا۔ ویسے بھی میں ٹوسٹار جنرل تھا اور عارضی طور پر ٓائی ایس ٓائی کا انتظام دیکھ رہا تھا۔ اور پھر میں تھری سٹار جنرل بن گیا اور میاں صاحب نے کہا کہ ٓاپ ہی کام کو جاری رکھیں کیونکہ ٓارمی چیف مرزا اسلم بیگ گئے اور اب ٓاصف نواز جنجوعہ ٓارمی چیف ہیں۔ یہ دماغی خلل ہے، نوازشریف نے سوچا کہ اگر ٓاصف نواز نے نیا ڈی جی ٓائی ایس ٓائی لگایا توان دونوں کا گٹھ جوڑ ہو جائے گا۔ نوازشریف میرے بارے میں شکوک و شبہات کا شکار تھے مگر جب آصف نواز ٓارمی چیف بن گئے تو انہوں نے کہا یہی بندہ ٓائی ایس ٓائی
چیف لگا رہے۔
سیاستدانوں میں ہمارا غلط تاثر پایا جاتا ہے
یہ وہ غلط تاثر ہے جو سویلین سیاستدانوں میں پایا جاتا ہے۔ انہیں معلوم ہی نہیں کہ فوج میں وفاداریاں کیسے کام کرتی ہیں۔ ہم کسی کے ٓادمی نہیں ہوتے
9
۔ اس موقع پر را کے سابق سربراہ اے ایس دلت نے مداخلت کرتے ہوئے کہا کہ میں اس بات سے مکمل اتفاق کرتا ہوں کیونکہ مجھے بھی فاروق عبد کا بندہ کہا جاتا تھا، اس کے بعد مجھے برجیش مشرا کا بندہ کہا جانے لگا۔ جنرل
اسد درانی نے اپنی بات پھر شروع کی اور کہا ہم کسی کو پسند نا پسند تو کرسکتے ہیں مگر جب ہمارا کام ٓاتا ہے تو ہم صرف اپنے ادارے کے وفادار ہوتے ہیں۔ یہ ٓاج بھی ہمارا ایک پلس پوائنٹ ہے۔ مثال کے طور پر 0880میں
خلیج کی جنگ پر میں اسلم بیگ سے متفق نہیں تھا جبکہ نوازشریف کی افغان پالیسی پر میرا اخت ف ہوا۔ نوازشریف کا کہنا تھا کہ افغان لویہ جرگہ کے لیے ہم وسیع تراتفاق رائے کی کوشش کر رہے ہیں جس میں اقوام متحدہ کو بھی شامل کیا جائے کیونکہ پاکستان اکی ، یا پاکستان ایران یا سعودی عرب اکیلے یہ کام نہیں کر سکتے۔ اسی طرح یہ سب کو معلوم ہے کہ خلیجی بحران کو اسلم بیگ کس نظر سے دیکھتے تھے مگر ڈی جی ملٹری ٓاپریشنز نے ان سے اخت ف کیا۔ بطور ڈی جی ٓائی ایس ٓائی میں بھی ان سے متفق نہیں تھا۔ مگر اس مخالف پر اسلم بیگ ہمارے دشمن نہیں ہو گئے ۔ جب ان کا اندازہ غلط ثابت ہوگیا تو انہوں نے سرعام تسلیم کیا کہ وہ غلط تھے۔ یہ تھی اس ٓادمی کی عظمت۔ جہاں تک نوازشریف کا تعلق ہے وہ مجھ پر اعتماد نہیں کرتے تھے۔ اس لیے چھ ماہ بعد جب انہیں موقع م تو وہ اپنی پسند کا بندہ لے ٓایا۔ میں چ گیا۔ بلکہ میرے لیے تو یہ بہتر ہوا۔ میں واپس فوج کے مین سٹریم میں چ گیا۔ اس کے بعد میں ملٹری ٹریننگ کے شعبے میں چ گیا۔ اس دور
میں میں بہت خوش تھا۔ اس کے بعد میں نیشنل ڈیفنس کالج چ گیا۔ میں خوش قسمت رہا کہ میں نے فوج کے تمام ہی شعبوں میں کام کیا۔
10
3
جب را نے کہا ’’یہ تو ہمارا ‘‘فرض تھا
آئی ایس آئی اور بھارتی خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہان کی تہلکہ خیز کتاب کا خ صہ ۔۔۔ تیسرا باب
جنرل درانی کے بیٹے کاروباری سلسلے میں بھارت گئے
جنرل اسد درانی نے بتایا کہ ان کے بیٹے عثمان مئی 5102 میں بھارت میں پھنس گئے تھے۔ لیکن را نے انہیں وہاں سے نکلنے میں مدد دی۔ عثمان جرمنی کی ایک کمپنی کے بانیوں میں شامل تھے۔ اس کمپنی کا ایک دفتر بھارت میں بھی کھو گیا۔ عثمان بیس برس سے جرمنی میں ٓاباد تھے اور انہیں کمپنی کے لیے کام کرتے ہوئے پندرہ برس ہو گئے تھے۔ وہ کمپنی کے
سافٹ ویئر ڈویژن کے سربراہ تھے۔ لیکن انہوں نے کبھی جرمن شہریت نہیں لی تھی اور وہ خود کو محب وطن پاکستانی کہتے تھے اور اس وجہ سے جرمن شہریت لینے سے انکاری تھے۔ عثمان پاکستانی پاسپورٹ پر بھارتی شہر کوچی کا ویزہ لے کر وہاں پہنچے۔ ان کی ٓامد کا مقصد کمپنی کے لیے نئے لوگ بھرتی کرنا اور عملے کی حوصلہ افزائی کرنا تھا۔ جنرل درانی
11
کہتے ہیں کہ کوچی شہر کے لوگ اردو نہیں بول سکتے تھے۔ لیکن انہیں ایک پاکستانی کو اپنے درمیان دیکھ کر بہت خوشی ہوئی۔ وہ عثمان سے یہ بھی کہتے رہے کہ وہ اگلی بار اپنے بیوی بچوں کو بھی ساتھ ئیں۔
جنرل درانی کے بیٹے کو طیارے سے اتار دیا گیا
جنرل درانی کے بیٹے عثمان جب جرمنی واپس جانے لگے تو کوچی کے عملے نے ان کی ف ئٹ ممبئی سے بُک کروا دی۔ عثمان نہیں جانتے تھے کہ بھارت میں ٓانے والے پاکستانی صرف اسی شہر میں رہ سکتے ہیں جس کا ویزہ موجود ہو۔ کسی نئے شہر جانے کے لئے انہیں پولیس سٹیشن اور غیرملکیوں کے رجسٹریشن ٓافس سے کلیئرنس لینا پڑتی ہے۔ جب وہ ممبئی ائرپورٹ پر پہنچے تو ائرپورٹ کے عملے نے دیکھا کہ ان کے پاسپورٹ پر ممبئی کا ویزہ نہیں ہے پھر وہ اس شہر میں کیسے داخل ہوئے؟ اس لئے انہیں طیارے میں سوار ہونے کی اجازت نہیں دی گئی اور ائرپورٹ سے جانے کے لیے کہہ دیا گیا۔ عثمان نے اپنے والد کو صورتحال سے ٓاگاہ کیا جو اتنے پریشان ہوئے کہ انہوں نے امرجیت سنگھ دولت کو فون کردیا۔ امرجیت سنگھ دولت کہتے ہیں کہ ان کے لیے دہلی کے مقابلے میں ممبئی میں اپنے تعلقات استعمال کرنا زیادہ ٓاسان تھا۔
را کی اط ع پر جنرل مشرف کی جان بچی تھی،
را چیف کا انکشاف
امرجیت سنگھ دولت نے را میں اپنے سابق کولیگ سے رابطہ کیا۔ یہ عہدیدار5112 میں را کا حصہ تھے جب را کی طرف سے ٓائی ایس ٓائی کو
12
دی گئی ایک خفیہ اط ع پرجنرل مشرف کی جان بچا لی گئی تھی۔ امرجیت کو یقین ہے کو اس اط ع میں ان کے کولیگ نے بھی کردار ادا کیا تھا۔
جنرل درانی کے بیٹے کو بھارت سے کیسے نکا گیا
عثمان بھارت کے کسی سرکاری دفتر میں پہنچ گئے۔ جہاں وہ جس افسر کے پاس بھی جاتے تھے انہیں کہا جاتا کہ وہ صاحب اپنی سیٹ پر موجود نہیں ہیں۔ تاہم کسی نے بھی عثمان کو یہ نہیں بتایا کہ ان کے پاس ممبئی کا ویزہ ہی موجود نہیں ہے۔ جنرل درانی اور ان کی اہلیہ پریشان تھے کہ اگر کسی کو معلوم ہو گیا کہ ٓائی ایس ٓائی کے سابق سربراہ کا بیٹا ممبئی میں گھوم رہا ہے تو کیا ہو گا۔ کیونکہ ممبئی شہر کے لوگ00/52 کے واقعات نہیں بھُولے تھے۔ حت ٰی کہ جس ٹیکسی میں عثمان نے سفرکیا تھا اس کا ڈرائیور بھی حا ت سے ٓاگاہ تھا۔ ایک قُلی نے بھی عثمان کو مشورہ دیا کہ وہ کوچی واپس چلے جائیں۔ جنرل درانی نے امرجیت سنگھ دولت کو کئی بار فون کیا اور پوچھا کہ کیا عثمان کو واپس کوچی بھیج دیا جائے۔ تاہم امرجیت سنگھ دولت نے ان سے کہا کہ ہمارے لوگ اس حوالے سے کام کررہے ہیں اور انشاء عثمان ممبئی سے ہی طیارے میں بیٹھ کر جائیں گے۔ ٓاپ کو پر یقین ہے تو مجھے بھی واہے گرو پر بھروسہ ہے۔
اس ساری صورتحال میں چوبیس گھنٹے گزر گئے۔ اس دوران دولت نے بھارتی انٹیلیجنس بیورو کے ایک افسر جیون ورکار سے رابطہ کیا۔ جیون کی مداخلت پر عثمان کو ممبئی ائرپورٹ سے جانے کی اجازت مل گئی۔ عثمان نے جرمنی کے شہر میونخ کے لیے فوری طور پرجرمن ائر ئنز لوفتھانزا
13
کی ویب سائٹ سے اگلی ف ئٹ بُک کر لی۔ یوں را کے سابق سربراہ کی کوششوں سے سابق ٓائی ایس ٓائی چیف کے بیٹے کو بھارت سے جانے کی اجازت مل گئی۔
جنرل درانی کے بیٹے جرمن شہری بن گئے
عثمان نے جرمنی لوٹ کراپنی بیوی اور دو بیٹیوں کے ساتھ جرمنی کی شہریت اختیار کر لی تاکہ پھر بھارت میں انہیں ایسی مشکل کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ جنرل اسد درانی نے عثمان کے ممبئی سے نکلنے کے بعد امرجیت سنگھ دولت کو فون کیا اور کہا کہ ٓاپ کے واہے گرو پر ایمان نے عثمان کو بچا لیا۔ دولت نے جواب دیا کہ واہے گرو نے کہا تھا کوئی ہندو ہے نہ مسلمان۔ ہم سب ایک ہی مذہب پرپیدا ہوئے ہیں۔ کائنات چ نے والی عظیم ہستی نے عثمان کو بچایا ہے۔ دولت نے جیون کا شکریہ ادا کرنے کے ساتھ ساتھ را میں اپنے سابق ساتھی کو بھی فون کیا۔ اس شخص نے شکریے کے جواب میں جنرل درانی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ان کی مدد کرنا ہمارا فرض تھا کیونکہ ٓاخر وہ بھی ہمارے کولیگ ہیں۔

First World War (1914-1918): Causes and Consequences PDF Notes

Add Comment
The reasons for World War I stay dubious and talked about inquiries. World War I started in the Balkans in late July 1914 and finished in November 1918, leaving 17 million dead and 20 million injured.

Researchers taking a gander at the long haul try to clarify why two opponent arrangements of forces – Germany and Austria-Hungary from one viewpoint, and Russia, France, and Great Britain on the other – had clashed by 1914. They take a gander at such factors as political, regional and monetary clashes, militarism, an unpredictable web of organizations together and arrangements, government, the development of patriotism, and the power vacuum made by the decrease of the Ottoman Empire. Other critical long haul or auxiliary factors that are frequently considered incorporate uncertain regional debate, the apparent breakdown of the adjust of energy in Europe,[1][2] convoluted and divided administration, the arms races of the earlier decades, and military planning.[3]

Researchers doing here and now examination concentrated on summer 1914 inquire as to whether the contention could have been halted, or whether it was crazy. The prompt causes lay in choices made by statesmen and officers amid the July Crisis of 1914. This emergency was activated by the death of Archduke Franz Ferdinand of Austria by an ethnic Serb who had been bolstered by a patriot association in Serbia.[4] The emergency heightened as the contention between Austria-Hungary and Serbia came to include Russia, Germany, France, and eventually Belgium and Great Britain. Different variables that became an integral factor amid the strategic emergency that went before the war included misperceptions of aim (e.g., the German conviction that Britain would stay nonpartisan), submission to the inevitable that war was unavoidable, and the speed of the emergency, which was exacerbated by postponements and false impressions in political correspondences.

The emergency took after a progression of political conflicts among the Great Powers (Italy, France, Germany, Britain, Austria-Hungary and Russia) over European and pilgrim issues in the decades prior to 1914 that had left strains high. Thusly these open conflicts can be followed to changes to be decided of energy in Europe since 1867.[5]

Agreement on the beginnings of the war stays subtle since students of history differ on key factors, and place contrasting accentuation on an assortment of components. This is exacerbated by changing verifiable contentions after some time, especially the postponed accessibility of arranged chronicled documents. The most profound qualification among history specialists is between the individuals who concentrate on the activities of Germany and Austria-Hungary as key and the individuals who concentrate on a more extensive gathering of performers. Auxiliary blame lines exist between the individuals who trust that Germany purposely arranged an European war, the individuals who trust that the war was at last spontaneous yet at the same time caused basically by Germany and Austria-Hungary going out on a limb, and the individuals who trust that either all or a portion of alternate forces, to be specific Russia, France, Serbia and Great Britain, assumed a more huge part in causing the war than has been customarily proposed.

Download HERE